رکشہ ڈرائیور نے 2 ساتھیوں کے ساتھ مل کر 13 سالہ بچی کو اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا

لاہور میں حوا کی اور بیٹی کی عزت تار تار کر دی گئی، رکشہ ڈرائیور نے ساتھیوں کے ساتھ مل کر 13 سالہ بچی کو اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا۔ تفصیلات کے مطابق لاہور میں حوا کی ایک اور بیٹی کو اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنا دیا گیا۔ ذرائع کے مطابق پنجاب کے دارالحکومت میں واقع علاقے شاہدرہ میں تین افراد نے 13 سالہ بچی کو مبینہ طور پر اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا۔
رپورٹ کے مطابق لاہور کے علاقے شاہدرہ کی رہائشی13سال کی لڑکی سے 3 افراد نے مبینہ طور پر اجتماعی زیادتی کی۔پولیس اور تحقیقاتی ٹیموں نے واقعے کے بعد جائے وقوعہ سے سے شواہد جمع کیے اور میڈیکل رپورٹ آنے کے بعد شیرا کوٹ تھانے میں زیادتی کا مقدمہ درج کرلیا۔ پولیس نے والد کی مدعیت میں مقدمہ درج کرنے کے بعد ایک ملزم کے والد کو حراست میں لیا اور متاثرہ خاندان کو تینوں ملزمان کی جلد گرفتاری کی یقین دہانی بھی کرائی۔

والد نے مقدمے کی درخواست میں مو¿قف اختیار کیا کہ بیٹی کورکشہ ڈرائیور شیرا کوٹ ملک میں واقع پارک میں لایا، جس کے بعد ا±س نے اپنے دو ساتھیوں رمضان اور علی کو بلا کر بیٹی کو زیادتی کا نشانہ بنایا۔تفتیشی افسر نے بتایا کہ تینوں ملزمان کی گرفتاری کے لیے چھاپے مارے جارہے ہیں، انہیں جلد گرفتار کر کے قانون کے مطابق سزا دی جائے گی۔واضح رہے کہ لاہور سمیت پاکستان میں بھر میں بچوں اور خواتین کے ساتھ جنسی زیادتی کے واقعات میں نمایاں بڑھوتری دیکھنے میں آئی ہے، تاہم حکومت اس ضمن میں خاطر خواہ اقدامات اُٹھانے میں ناکام ٹھہری ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے